Bulleh Shah – بلھے شاہ

->->Bulleh Shah – بلھے شاہ

Bulleh Shah – بلھے شاہ

By | 2019-07-13T00:39:15+05:00 July 11th, 2019|Me-Raqsam|0 Comments

Syed Abdullah Shah Qadri (Punjabi: سید عبداللہ شاہ قادری) (Shahmukhi), ਸਈਅਦ ਅਬਦੁੱਲਾ ਸ਼ਾਹ ਕਾਦਰੀ (Gurmukhi); 1680–1757) popularly known as Bulleh Shah (بلھے شاہ (Shahmukhi); ਬੁੱਲ੍ਹੇ ਸ਼ਾਹ (Gurmukhi)), was a Mughal-era Punjabi Islamic philosopher and Sufi poet. His first spiritual teacher was Shah Inayat Qadiri, a Sufi murshid of Lahore.

Bulleh Shah lived after the Pashto Sufi poet and saint Rahman Baba (1632–1706) and lived in the same period as Sindhi Sufi poet Shah Abdul Latif Bhittai (1689–1752). His lifespan also overlapped with the Punjabi poet Waris Shah (1722–1799), of Heer Ranjha fame, and the Sindhi Sufi poet Abdul Wahab (1739–1829), better known by his pen name Sachal Sarmast. Amongst Urdu poets, Bulleh Shah lived 400 miles away from Mir Taqi Mir (1723–1810) of Agra.[citation needed]

Bulleh Shah practised the Sufi tradition of Punjabi poetry established by poets like Shah Hussain (1538–1599), Sultan Bahu (1629–1691), and Shah Sharaf (1640–1724).

The verse form Bulleh Shah primarily employed is the Kafi, popular in Punjabi and Sindhi poetry.

Many people have put his Kafis to music, from humble street-singers to renowned Sufi singers like Nusrat Fateh Ali Khan, Pathanay Khan, Abida Parveen, the Waddali Brothers and Sain Zahoor, from the synthesised techno qawwali remixes of UK-based Asian artists to the Pakistani rock band Junoon.

بلھے شاہ کا اصل نام عبد اللہ شاہ ہے۔آپ رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہ 3 مارچ 1680ء (1091ھ) میں مغلیہ سلطنت کے عروج میں اوچ گیلانیاں میں پیدا ہو ئے۔ کچھ عرصہ یہاں رہنے کے بعد قصور کے قریب پانڈومیں منتقل ہو گئے۔ان کے والد سخی شاہ محمد درویش مسجد کے امام تھے اور مدرسے میں بچوں کو پڑھاتے تھے۔ بلّہے شاہ نے والد سے ابتدائی تعلیم حاصل کی۔ بعد قصور جا کر قرآن، حدیث، فقہ اور منطق میں اعلیٰ تعلیم حاصل کی۔ قرآن ناظرہ کے علاوہ گلستان بوستان بھی پڑھی اور منطق، نحو، معانی، کنز قدوری،شرح وقایہ، سبقاء اور بحراطبواة بھی پڑھا۔ شطاریہ خیالات سے بھی مستفید ہو ئے۔ ایک خاص سطح تک حصولِ علم کے بعد ان پر انکشاف ہوا کہ دنیا بھر کے علم کو حاصل کر کے بھی انسان کا دل مطمئن نہیں ہوسکتا۔ سکونِ قلب کے لیے صرف اللہ کا تصور ہی کافی ہے۔ اسے اپنی ایک کافی میں یوں بیان کیا۔علموں بس کر او یار۔اکّو الف تیرے درکار وہ خود سیّد زادے تھے لیکن انہوں نے شاہ عنایت کے ہاتھ پر بیعت کی جو ذات کے آرائیں تھے اس طرح بلّہے شاہ نے ذات پات، فرقے اور عقیدے کے سب بندھن توڑ کر صلح کل کا راستہ اپنایا۔ مرشد کی حیثیت سے شاہ عنایت کے ساتھ ان کا جنون آمیز رشتہ ان کی مابعد الطبیعیات سے پیدا ہوا تھا۔ وہ پکے وحدت الو جودی تھے، اس لیے ہر شے کو مظہر خدا جانتے تھے۔ مرشد کے لیے انسان کامل کا درجہ رکھتے تھے۔ مصلحت اندیشی اور مطابقت پذیری کبھی بھی ان کی ذات کا حصہ نہ بن سکی۔ ظاہر پسندی پر تنقید و طنز ہمہ وقت ان کی شاعری کا پسندیدہ جزو رہی۔ ان کی شاعری میں شرع اور عشق ہمیشہ متصادم نظر آتے ہیں اور ان کی ہمدردیاں ہمیشہ عشق کے ساتھ ہوتی ہیں۔ ان کے کام میں عشق ایک ایسی زبردست قوت بن کر سامنے آتا ہے جس کے آگے شرع بند نہیں باندھ سکتی۔ بلّہے شاہ کو ملاّ کے تصورِ دین سے سخت نفرت ہوچکی تھی۔ عربی فارسی میں عالم ہونے کے باوجود انہوں نے پنجابی کو ذریعۂ اظہار بنایا تاکہ عوام سے رابطے میں آسکیں۔
بلھے شاہ مغلیہ سلطنت کے عالمگیری عہد کی روح کے خلاف رد عمل کانمایاں ترین مظہر ہیں۔ ان کا تعلق صوفیاء کے قادریہ مکتب فکر سے تھا۔ ان کی ذہنی نشو و نما میں قادریہ کے علاوہ شطاریہ فکر نے بھی نمایاں کردار ادا کیا تھا۔ اسی لیے ان کی شاعری کے باغیانہ فکر کی بعض بنیادی خصوصیات شطاریوں سے مستعار ہیں۔ ایک بزرگ شیخ عنایت اللہ قصوری، محمد علی رضا شطاری کے مرید تھے۔ صوفیانہ مسائل پر گہری نظر رکھتے تھے اور قادریہ سلسلے سے بھی بیعت تھے اس لیے ان کی ذات میں یہ دونوں سلسلے مل کر ایک نئی ترکیب کا موجب بنے۔ بلھے شاہ انہی شاہ عنایت کے مرید تھے۔

Gallery

Video

Map